اس وقت تمام اختلاف بھلا کر ایک ہو جانیں

اس وقت گودی اور منافق میڈیا (شوسل میڈیا) تبلیغی جماعت کے خلاف جو پروپیگنڈہ کر رہی ہے, اور جس طرح حقائق کو توڑ مروڑ کر پیش کررہی ہے اور ہندو مسلم نفرت کا ماحول بنا رہی ہے وہ اخلاقی گراوٹ اور انسانی پستی کی انتہا ہے، ایسے مشکل حالات اور پریشان کن گھڑی اور انسانی بحران کے وقت بھی گندی اور گھٹیا سیاست کرنا ایک شرم ناک حرکت ہے۔ اس سے پتہ چلتا ہے کہ مانوتا اور انسانیت کتنی گر چکی ہے اور یہ ملک اخلاقی زوال اور انسانی پستی کی کس انتہا کو پہنچ چکا ہے۔

اگر مندر اور مٹھ میں لوگوں کی بھیڑ موجود ہے تو یہ بے شرم میڈیا کے لوگ کہہ رہے ہیں کہ وہ لوگ پہنسیں ہوءے ہیں، اگر کسی مسجد اور مدرسہ میں کچھ مسلمان لاک ڈاون کی وجہ سے رکے ہوئے ہیں تو یہ گودی میڈیا ان کے بارے میں یہ کہہ رہی ہے کہ وہ چھپیں ہوءے ہیں۔ یہ کیسی دو رخی پالیسی اور کتنی منفی سوچ ہے۔
میں گودی میڈیا کے ذریعہ تبلیغی جماعت کو بے جا تنقید اور سب و ستم کا نشانہ بنانے کی پر زور مذمت کرتا ہوں، اور اسے نفرت انگیز پروپیگنڈہ مانتا ہوں۔ گودی میڈیا کے پاس تو یہ ایجنڈا ہے وہ بکے ہوئے ہیں۔ لیکن ہمارے نادان دوست اور نام نہاد مسلمان جو حرکت کر رہے ہیں اور میڈیا کی تائید کر رہے اور ڈبیٹ کے ذریعہ جماعت تبلیغ کے خلاف زہر اگل رہے ہیں ان کی فہم اور عقل پر ماتم کرنے کے علاوہ ہم کیا کر سکتے ہیں۔ منصافانہ اور غیر جانبدارانہ تحقیق ہونی چاہیے یہ حکومت کی ذمہ داری ہے۔ لیکن نفرت اور تعصب کا لبادہ اوڑھ کر کوئی تحقیق اور تفتیش نہیں ہونی چاہیے۔
مجھے سمجھ میں نہیں آرہا ہے کہ مصیبت کی اس گھڑی اور سنکٹ کے اس سمیے پر بھی ہندوستان کے بہت سےنیتا لوگ اور میڈیا والے منفی سیاست کیسے کر رہے ہیں۔ ان کا اخلاقی معیار اتنا گر کیسے گیا ہے۔
اس مشکل وقت میں سارے لوگوں کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ پرہیز و احتیاط بھی کریں اور بے سہارا اور محتاج لوگوں کے کھانے پینے کا نظم کریں۔
میں تمام ہندوستانی باشندوں سے اور خاص طور پر مسلمانوں سے درخواست کرتا ہوں کہ میڈیا کے اس گمراہ کن اور نفرت آمیز پروپیگنڈہ پر کان نہ دھریں، حقائق تک پہنچنے کی کوشش کریں اور اس منافق میڈیا کے پروپیگنڈہ کو ناکام کریں۔
جماعت کے آراء اور طرز عمل سے لاکھ اختلاف کی گنجائش ہے۔ لیکن یہ موقع نہیں ہے کہ ہم اس موقع پر ان چیزوں کو سامنے آنے دیں، بلکہ ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ اس جماعت کا قانونی اور جمہوری حدود میں رہ کر ساتھ دیں اور دشمن کو کامیاب ہونے کا موقع فراہم نہ کریں۔ جس طرح وہ ہماری کمیوں کو تلاش کرنے مین لگے رہتے ہیں۔ ہم بھی حقائق پر نظر رکھیں اور ان کی ساری شرارتوں کو جگ ظاہر کردیں تاکہ آنندہ وہ ایسی حرکتوں سے باز رہیں۔

*محمد قمر الزماں ندوی*
*جنرل سیکرٹری مولانا علاءالدین ایجوکیشنل سوسائٹی جھارکھنڈ،*

سوشل میڈیا پر ہمیں فالو کریں
سوشل میڈیا پر شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے