شرائط وجوب زکوة

🌻 *تاریخ* 🌻
_*☪ ٣شعبان المعظم١٤٤١ھ*_
_*🔆 29مارچ2020*_
🌤 بروز۔ *اتوار*
📓 *مسٸلہ* 📙
✒ شرائط وجوب زکوة ۔۔
📙زکوۃ فرض ہونے کے لئے درج ذیل شرائط کا پایا جا نالازم ہے:
(۱) مال بقدر نصاب ہو (مثلا سونے کا نصاب ۴۰ مثقال(ساڑھے سات تولہ )، اور چاندی کا نصاب دوسودرہم وغیرہ)(۲) ملکیت تام ہو لہذاجو مال اپنے قبضہ میں نہ ہو سردست اس کی زکوة کا مطالبہ نہیں ہے)(۳) نصاب ضرورت اصلی سے زائد ہو (استعالی ساز و سامان پر زکوتہ نہیں ہے)(۴) نصاب قرض سے خالی ہو لیکن قرض کی رقم منہا کر کے نصاب مکمل مانا جائے)(۵) مال نامی ہو( یعنی ایسا مال جس میں بڑھنے کی صلاحیت ہو خواہ وہ اپنی خلقت کےاعتبار سے ہو جیسے سونا چاندی یا علی اعتبار سے ہوجیسے مالی تجارت مویشی وغیرہ)۔واللہ اعلم بالصواب۔
(مستفاد: کتاب المساٸل
📚 منها كون المال نصاب…………، ومنها الملک التام و منها فراغ المال عن حاجته الأصلية فليس في دور السکنی وثياب البدن وأثاث المنازل ودواب الركوب وعبيد الخدمةوسلاح الاستعمال زكاة ، ومنها الفراغ عن الدين ……….. ومنها كون النصاب نامية.(عالمگیری ۱۷۲/۱ -۱۷۹، بدائع الصنائع ۲/ ۸۸، شامی زکریا ۱۷۶/۳ ، الموسوعة الفقهية ۲۳۹/۲۳ ) 📚
حدیث النبیﷺ۔عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ: «إِنَّ الْمَرْأَةَ لَتَأْخُذُ لِلْقَوْمِ» يَعْنِي تُجيرُ على الْمُسلمين. رَوَاهُ التِّرْمِذِيّ
حضرت ابوہریرہ ؓ سے روایت ہے کہ نبی صلی ‌اللہ ‌علیہ ‌وآلہ ‌وسلم نے فرمایا :’’ بے شک عورت ، قوم کفار کو مسلمانوں کی طرف سے پناہ دے سکتی ہے ۔‘‘ اسنادہ حسن ، رواہ الترمذی ۔۔
أوکماقال النبی ﷺ۔
(مشکوةشریف حدیث نمبر ٣٩٧٨ )
ناقل✍ہدایت اللہ قاسمی
خادم مدرسہ رشیدیہ ڈنگرا،گیا،بہار
HIDAYATULLAH
TEACHER MADARSA RASHIDIA DANGRA GAYA BIHAR INDIA
نــــوٹ:دیگر مسائل کی جانکاری کے لئے رابطہ بھی کرسکتے ہیں
CONTACT NO
6206649711
🇮🇳🇮🇳🇮🇳🇮🇳🇮🇳🇮🇳

سوشل میڈیا پر ہمیں فالو کریں
سوشل میڈیا پر شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے